سندھ گورنمنٹ نے پھر کراچی کو نظر انداز کر دیا

مالی سال 2021-22 کے لئے سندھ حکومت کے بجٹ کو یکسر مسترد کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنماؤں نے جمعرات کے روز کہا ہے کہ سندھ میں حکمران جماعت پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کراچی والوں کوعام انتخابات میں پی پی پی کو ووٹ نہ دینے کی سزا دے رہی ہے

جسٹس ہاؤس میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پی ٹی آئی کراچی کے سربراہ اور ایم پی اے خرم شیر زمان نے کہا کہ سندھ کے بجٹ میں کراچی کو نظرانداز کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا ، کراچی پورے ملک کو چلا رہا ہے اور میٹروپولیٹن شہر کے بارے میں ایسا رویہ ناقابل برداشت ہے ۔

پی ٹی آئی رہنما نے دعوی کیا کہ سندھ حکومت نے گذشتہ سال شہر کے لئے انیس منصوبوں کا اعلان کیا تھا لیکن ان میں سے بارہ پر ایک روپیہ بھی خرچ نہیں کیا گیا ۔ انہوں نے چیف منسٹر کو نااہل قرار دیتے ہوئے کہا کہ بجٹ تقریر میں اس بات کا کوئی ذکر نہیں ہے کہ ٹرانسپورٹ کے نظام کو کیسے بہتر بنایا جائے گا ۔

انہوں نے کہا کہ پینے کے پانی کی قلت کراچی کا سب سے بڑا مسئلہ ہے اور امید کی جارہی ہے کہ بجٹ میں میٹروپولیٹن کے رہائشیوں کو ٹینکر مافیا سے بچایا جائے گا۔ لیکن وزیر اعلی نے ٹینکر مافیا کے خلاف کوئی بات نہیں کی اور نہ ہی پانی کی قلت کے مسئلے کو حل کرنے کے لئے کچھ اعلان کیا ۔

صوبے میں ایمبولینسوں کی کمی ہے ۔ بجٹ میں ایمبولینسوں کے لئے کوئی حکمت عملی مرتب نہیں کی گئی ہے ۔ انہوں نے ریمارکس دیئے کہ معصوم بچے مر رہے ہیں اور کتوں کے کاٹنے کی ویکسینشن کے لئے کوئی کام شروع نہیں کیا گیا ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button