برطانیہ میں ناموس رسالتﷺ کا مسئلہ

برطانوی رکن پارلیمنٹ ناز شاہ نے ناموس رسالت ﷺ کا معاملہ برطانوی پارلیمنٹ میں اٹھا دیا ۔ برطانوی پارلیمنٹ سے خطاب میں ناز شاہ نے کہا کہ حکومت قومی شخصیات کے مجسموں کی حفاظت کے لیے بل لارہی ہے ۔

دلیل یہ دی جارہی ہے کہ مجسمے توڑنے اور گرانے سے لوگوں کے جذبات مجروح ہوتے ہیں تو کیا پیغمبروں سے متعلق مسلمانوں کے جذبات کا خیال اہم نہیں ہے ۔

برطانیہ میں مجسموں کو نقصان پہنچانے پر 10 سال قید کی سزا تجویز کی گئی ہے ۔ ناز شاہ کا کہنا تھا کہ مجوزہ قانون سازی کے  مطابق لوگوں کے لیے جذبات مجروح کرنے پر زیادہ سے زیادہ 10 سال قید کی سزا تجویز کی گئی ہے ۔

جب متعصب اور نسل پرست لوگ حضرت محمدﷺ کی شان میں گستاخی کرتے ہیں تو یہ ایسا ہی ہے جیسے  برطانوی عوام کے لیے ونسٹن چرچل کی توہین ہے ۔ اس گستاخی سے مسلمانوں کے جذبات کو اتنی ٹھیس پہنچتی ہے جو ناقابل برداشت ہے ۔

انہوں نے کہا کہ عظیم شخصیات کی توہین ہر مذہب مسلک سے تعلق رکھنے والے کے لیے تکلیف دہ ہوتی ہے اور ہم جذبات مجروح ہونے کے اس عمل کو تسلیم کرتے ہیں ۔

لہذا ہمارے جذبات کا احساس کرتے ہوئے ناموس رسالت ﷺ کے خلاف بات پر سزا مقرر کی جائے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button