انٹرنیشنل پریس بھی پاکستانی میڈیا قانون کے خلاف

ویانا : انٹرنیشنل پریس انسٹی ٹیوٹ (آئی پی آئی) نے پیر کے روز پاکستان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی (پی ایم ڈی اے) کی قانون سازی کے خلاف پاکستان میں صحافیوں کے احتجاج کی حمایت کا اظہار کیا اور حکومت پر زور دیا کہ وہ اس قانون کو واپس لے ۔

پاکستان میں صحافیوں نے دارالحکومت اسلام آباد میں پارلیمنٹ کے باہر دھرنا دیا اور حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ متنازعہ پی ایم ڈی اے بل واپس لے ۔

پیر کو جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ پریس کی آزادی کے لیے ایڈیٹرز ، میڈیا ایگزیکٹوز اور صحافیوں کے عالمی نیٹ ورک آئی پی آئی نے پہلے خبردار کیا تھا کہ میڈیا پر حکومتی ریگولیٹری نگرانی کو وسیع کرنے والا قانون ملک میں پریس کی آزادی کو شدید نقصان پہنچائے گا ۔

ڈپٹی ڈائریکٹر سکاٹ گریفن

آئی پی آئی کے ڈپٹی ڈائریکٹر سکاٹ گریفن نے کہا کہ آئی پی آئی کا عالمی نیٹ ورک پاکستان میں صحافیوں کے ساتھ یکجہتی کے ساتھ کھڑا ہے جو کہ پی ایم ڈی اے کی سخت قانون سازی کے خلاف احتجاج کر رہا ہے ، جس سے پاکستان میں پریس کی آزادی شدید طور پر کمزور ہو جائے گی ۔

پی ایم ڈی اے بل میڈیا پر حکومت کے کنٹرول کو بڑھا دے گا اور اس وجہ سے صحافت کے کردار کو کمزور کرے گا ۔ آئی پی آئی نے فوری طور پر پاکستانی حکومت اور قانون سازوں سے اس بل کو مسترد کرنے کا مطالبہ کیا ہے ۔ اگر ریگولیٹری تبدیلیوں کی ضرورت ہے تو انہیں میڈیا کے نمائندوں اور سول سوسائٹی کے ساتھ قریبی تعاون و مشاورت سے تیار کیا جانا چاہیے جو قانون اظہار رائے کی آزادی اور بین الاقوامی معیار کی عکاسی کرتا ہو ۔

پاکستان میں پریس کی آزادی کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے آئی پی آئی نے وزیر اعظم سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اس آرڈیننس پر عملدرآمد نہ کریں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button