سپریم کورٹ سرکلر ریلو ے کی جلد بحالی کا خواہاں

کراچی : گذشتہ سال فروری میں ، سپریم کورٹ نے پاکستان ریلوے کو چھ مہینوں میں کراچی سرکلر ریلوے کو بحال کرنے اور چلانے کی ہدایت کی تھی ۔

اب دوبارہ سپریم کورٹ نے سندھ سرکلر ریلوے (کے سی آر) کے مجوزہ روٹ پر آنے والے ریلوے کراسنگ پر انڈر پاس اور اوور ہیڈ پلوں کی تعمیر کے لئے پی سی ون ، معاہدہ پر دستخط اور ورک آرڈر جاری کرنے کی ہدایت کی ۔

جمعرات کو جاری ہونے والے اپنے حکم میں چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں تین ججوں کے بنچ نے صوبائی حکومت کو مزید کہا کہ منصوبے پر عملدرآمد کے لیے فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن کو تمام مطلوبہ مالی وسائل مہیا کیے جائیں ، تاکہ ممکنہ طور پر اس کو تیزی سے مکمل کیا جاسکے ۔

انہوں نے سندھ کے ایڈووکیٹ جنرل کو ایک ماہ بعد اس سلسلے میں رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی ہے ۔

گذشتہ سال فروری میں ، سپریم کورٹ نے پاکستان ریلوے کو چھ مہینوں میں کے سی آر کو بحال کرنے اور چلانے کی ہدایت کی تھی اور صوبائی حکومت کو بھی کہا تھا کہ روڈ ٹریفک کی وجہ سے کے سی آر میں کوئی رکاوٹ نہ بنے ۔

اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ اس روٹ پر ضروری انفراسٹرکچر جلد بنایا جائے ۔ دسمبر میں سندھ حکومت نے سپریم کورٹ کو آگاہ کیا تھا کہ اس نے انڈر پاسوں اور اوور ہیڈ پلوں کی تعمیر کا معاہدہ ایف ڈبلیو او کو دیا تھا جو کے اب تک تعمیر نہیں ہوسکے ہیں ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button