کورونا اور تدریسی عمل ، نئے فیصلے

این سی او سی (نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن) کا خصوصی جائزہ اجلاس گزشتہ روز ہوا جس میں  کورونا کی تازہ صورتحال سے نمٹنے کے لیے لائحہ عمل پر غور کیا گیا،اجلاس میں   وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود اور وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان سمیت تمام  صوبوں اور اے جے کے / جی بی کے وزیر صحت و تعلیم نے شرکت کی۔

اتوار کو اجلاس میں وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے اعلان کیا کہ 1 سے 8  ویں جماعت تک کے لیے اسکول عید تک بند رہیں گے۔

وزیر  تعلیم شفقت محمود نے چاروں صوبوں کے وزیر صحت و تعلیم کے اجلاس کے دوران  اتفاق رائے سے کیے گئے فیصلوں کو ٹویٹر پر شیئر کیا ۔

وزیر تعلیم نے کہا کہ متاثرہ اضلاع میں 9ویں تا 12 ویں جماعت کے تعلیمی عمل کا آغاز آج پیر سے  ہوجائے گا، تدریسی عمل کا آغاز اس لیے کیا جا رہا ہے  تاکہ طلباء اپنے آنے والے بورڈ امتحانات کی تیاری کر سکیں۔

گریڈ 9 ، 10 ، 11 اور 12 کے طلباء کی کلاسیں 19 اپریل سے دوبارہ شروع ہونگی۔ گریڈ 9 تا 12 کے امتحانات مئی کے تیسرے ہفتے میں منتقل کیے جائیں گے۔

متاثرہ اضلاع کی یونیورسٹیاں بھی بند رہیں گی ، آن لائن کلاسز جاری رہیں گی، کورونا کیسز کی شرح 8 فیصد سے کم ہونے کی صورت میں یونیورسٹیاں فزیکل تدریسی عمل جاری رکھ سکیں گی۔

شفقت محمود کا کہنا ہے کہ کیمبرج نے یقین دہانی کرائی ہے کہ امتحانات کے دوران کورونا وائرس ایس او پیز کی سختی سے پیروی کی جائے گی۔

دوسری طرف حکومت سندھ  کے وزیر تعلیم سعید غنی نے پرائمری سے 8 ویں جماعت تک  کے لیے اسکول بند رکھنے کی تاریخ یکم  مئی مقرر کردی ، 9ویں، 10 ویں اور انٹر کی کلاسز 50 فیصد حاضری کو ساتھ جاری رکھنے کی ہدایت جاری کردی۔

Back to top button