کراچی میں ایک دن میں دو بار پاور بریک ڈاؤن

 کراچی کے شہریوں کو گزشتہ روز  پڑے پاور بریک ڈاؤن کا کا سامنا کرنا پڑا تھادو ایکسٹرا ہائی ٹینشن وائر تھیں جو ٹرپ ہوگئیں تھیں  جس کے باعث کراچی کا 70 سے 75 فیصد حصہ بجلی سے محروم ہوگیا تھا۔

نارتھ کراچی ، گولیمار ، کورنگی ، ناظم آباد ، الآصف اسکوائر ، صدر ، شاہ فیصل ، لانڈھی ، لیاقت آباد ، گلستان جوہر ، فیڈرل بی ایریا ، کلفٹن ، صفورا ، اور ڈی ایچ اے  جیسے متعدد علاقے دن کے نصف سے زائد حصے  میں بجلی کی فراہمی سے محروم  رہے۔

کے الیکٹرک جو کراچی میں بجلی کا واحد ڈسٹری بیوٹر ہے  کے ترجمان نے بتایا کہ 220 کے وی ہائی ٹینشن لائن ٹرپ ہونے کے بعد بجلی کی فراہمی میں خلل پڑا،اس کی وجہ سے متعلقہ گرڈوں کو فراہمی متاثر ہوئی ۔

بجلی کے محکمہ افسران نے شہریوں  کو یقین دلایا کہ بحالی کی کوششیں شروع ہوگئی ہیں اور ایک گھنٹہ میں مکمل ہوجائیں گی۔

لوگ اس بندش کے بارے میں جاننے کے لئے ٹوئٹر  کی طرف متوجہ ہوئے جہاں کے ای کے افسران مسلسل  عوام کو    پیشرفت سے آگاہ کرتے رہے۔

شکایتی مراکز اور کے – ای

کراچی کے رہائشیوں نے بتایا کہ وہ کے ای کے شکایتی مرکز سے شکایات درج کرانے کی کوشش کر رہے ہیں لیکن انہیں ابھی تک کوئی جواب موصول نہیں ہوا ہے۔

ٹرپنگ کے مسئلے کو حل کرنے کے بعد جب فیڈرز اور گرڈ اسٹیشنس پر  پاور سپلائی کا عمل شروع ہوا تو  اچانک  کے الیکٹرک کے بن قاسم پاور  اسٹیشن  میں گیس انسولیٹڈ  سسٹم لیک کرنے کے باعث اسکےایک یونٹ  میں فنی خرابی پیدا ہوگئی  اور کراچی ایک بار پھر  بجلی  کی فراہمی سے کئی گھنٹے کے لیے محروم ہوگیا۔

یہانتک کے کراچی کے بعض علاقوں میں   فجر سے  کچھ دیر پہلے لائٹ  آئی  اور کچھ علاقوں میں بحالی کے نام پر  ابھی بھی تین تین گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ جاری ہے جبکہ کے ای کی  طرف سے صبح ٹوئیٹ کیا گیا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ”کراچی کے تمام رہائشی اور کمرشل فیڈرز سے بجلی کی فراہمی بحال ہوچکی ہے”۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button