پاکستان نے امریکہ اور نیٹو کی مدد کردی

حکومت پاکستان کی جانب سے  افغانستان سے انخلا میں مدد کے لیے کی گئی امریکی فوج اور نیٹو کی درخواست منظور کرلی گئی ہے ۔

تفصیلات  کے مطابق نیٹو ممالک اور امریکہ نے افغانستان سے نکلنے میں مدد دینے کے لیے ،پاکستان سے تحریری درخواست کے ذریعے مدد طلب کی تھی ۔

ذرائع کے مطابق پاکستانی حکومت کی جانب سے اس درخواست کو منظور کرلیا گیا ہے۔امریکی سفارت خانے سے ارسال کیا جانے والا خط 20 اگست کو پاکستانی وزارتِ خارجہ کو موصول ہوا تھا ۔

رپورٹ کے مطابق خط میں امریکی فوجی طیاروں کے ذریعے کابل ایئر پورٹ سے مسافروں کو  نکالنے کے لیے ٹرانزٹ سہولیات فراہم کرنے کی درخواست کی گئی تھی۔

خط میں امریکی حکام نے واضح کیا تھا کہ مسافروں کو 3 کیٹیگریز پر مبنی لائحہ عمل کے تحت  نکالا جائے گا اور پاکستان سے ٹرانزٹ فلائٹس کے ذریعے وہ اپنی اپنی منزل کو روانہ ہوں گے۔

کیٹگریز

پہلی کیٹگریز میں امریکی سفارتکار ، دوسری میں امریکی شہری اور تیسری میں  امریکی حکومت کے لئے افغانستان میں کام کرنے والے غیر ملکی افراد جن میں افغانستان کےشہری بھی شامل ہیں۔

پاکستانی حکومت کی منظوری کے بعد اب  کابل سے  آنے والی ٹرانزٹ پروازیں کراچی کے جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر2 ہزار کے قریب غیر ملکیوں اور افغانیوں کو لے کر لینڈ کریں گی ۔

مراسلے میں یہ بھی  بتایا گیا تھا کہ ہر جہاز میں 5 سو مسافر سوار ہوں گے۔ ان آنے والے مسافروں کو  ایئرپورٹ پر ہی ویزہ کی فراہمی کے بعد انکے لیے مختص کیے گئے ہوٹلز اوررہائش گاہوں میں ٹہرا دیا جائے گا۔

کمشنر کراچی نے بھی اس ضمن میں پولیس ، سیکیورٹی اور متعلقہ اداروں کو ہدایت نامہ جاری کردیا ہے۔ ہدایت نامے میں بتایا گیا ہے کہ مسافروں کے لیے تین ہوٹلز مخصوص کیے گیے ہیں،جن میں انہیں ٹھرایا جائے۔

ہدایت نامے  میں یہ بھی  کہاگیا ہے کہ طیاروں کی لینڈنگ،انکی ری فیولنگ، مسافروں کے لیے سواریوں اور فول پروف سیکیورٹی کا بندوبست کیا جائے۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ یہ تمام انتظامات سندھ حکومت کی جانب سے کیے جائیں گے۔

خیال رہے کہ اسلام آباد ائیرپورٹ پر  ان طیاروں کی لینڈنگ کا آغاز 26 اگست سے ہو چکا ہے۔ان طیاروں  کے ذریعے 31اگست تک 3 ہزار مسافر اسلام آبادپہنچیں گے ۔

جبکہ 8 پروازوں کے مسافر 21روز تک ٹرانزٹ قیام بھی کرسکیں گے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button