ایٹمی پروگرام سے متعلق بیان پر اپوزیشن برہم

لیگی رہنما احسن اقبال نے عمران خان  کے انٹرویو میں انکے جوہری پروگرام سے متعلق تبصرے  کی وجہ سے ان پر سنگین الزام لگا دیا،انہوں نے کہا کہ  ہم بھی حیران تھے کہ فارن فنڈنگ کے تھیلے میں کونسی بلی ہے اور آخر کار بلی تھیلے سے باہر آگئی ہے،عمران خان کو ایٹمی پروگرام رول بیک کرنے کی سازش کے طور پر مسلط کیا گیا ہے۔

احسن اقبال نے مزید الزام لگایا اور کہا  کہ فارن ڈونرز کا یہی ایجنڈا تھا جس کے لیے وہ عمران خان  کو بر سر اقتدار لائے تھے۔

انہوں نے دو ٹوک موقف اختیار کرتے ہوئے کہا کہ  ایٹمی پروگرام پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوسکتا،نیوکلیئر اثاثے 22 کروڑ عوام کی ملکیت ہیں۔

کس نے حق دیا اس وزیر اعظم کو کہ یہ دنیا کو کہے کہ  پاکستان کا ایٹمی پروگرام  کسی مطالبے کے بدلے میں بند کیا جاسکتا ہے، یہ کہتے ہیں کہ کشمیر کا  مسئلہ حل کردو ہم ایٹمی پروگرام بند کرنے کے لیے تیار ہیں،ہمیں جوہری کھوج کی ضرورت نہیں ہے۔

آپکو کس نے یہ استحقاق دیا ؟،آپ پاکستان کے  ایٹمی پروگرام کے بارے میں کچھ بھی  بات نہیں کرسکتے ہیں ،مسئلہ کشمیر حل ہو نہ ہو،ایٹمی پروگرام پر سمجھوتہ نہیں ہوگا۔

دوسری جانب بلاول بھٹو نے بھی عمران خان کے بیان کے بعد   انہیں ملک کے لیے سیکیورٹی  رسک قرار دے دیا،انہوں نے کہا کہ خان صاحب کا جو بیان ہے ایٹمی ہتھیاروں کے بارے میں اسکے مطابق وہ قومی سلامتی کہ لیے ایک بڑا خطرہ ہیں۔

اسامہ بن لادن

بلاول نے کہا کہ ہمارا اپنا ہی وزیر خارجہ اسامہ بن لادن کے بارے میں انٹرنیشنل شوز پر  جاکر صحیح  طریقے سے بات نہیں کرسکتا اور ان باتوں سے پاکستان کی فارن پالیسی پر اثر پڑے گا۔

انہوں نے کہا کہ  ہمارا وزیر اعظم ایوان  کے فلور  پر کھڑے ہوکر  اسامہ بن لادن کو شہید کہتا ہے،کوئی پوچھے کہ اسامہ بن لادن دہشت گرد نہیں تو پھر دہشت گرد کون ہے۔

اسامہ بن لادن دہشتگردوں کے لیے ایک پوسٹر بن گیا تھا،جس نے یہ دہشتگردی کا نظام شروع کیا،جتنی بدنامی اسامہ بن لادن نے اسلام کے نام  کو دلوائی،تاریخ میں کسی اور نے اتنی بدنامی نہیں دلوائی۔

بلاول نے مزید کہا کہ عمران تو آج سے نہیں پہلے دن سے بزدل تھا،کبھی کسی دہشتگرد کو دہشتگرد کہنے کو  تیار ہی نہیں تھا۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button