مریم نواز کی پاپا کے حق میں آواز

مریم نواز نے آزاد کشمیر میں انتخابی مہم کے دوران آج لیپا  میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کئی لوگ پروپیگنڈا کرتے ہیں کہ نواز شریف فوج کے ادارے کا مخالف ہے، ان لوگوں کو شرم آنی چاہیے ۔

نواز شریف نے جن لوگوں پر تنقید کی  ،اسکو کسی ادارے پر تنقید کا نام نہ دیا جائے۔ ان لوگوں کے کاموں کا نقصان پاکستان اور کشمیر کے ساتھ ساتھ ان اداروں کو بھی پہنچا۔

ملکی ترقی کے لیے اداروں کو نواز شریف کے بیانیے پر چلنا ہوگا،وہ دن دور نہیں جب سب نواز شریف کی زبان بولیں گے،نواز  شریف کا دشمن  بھی نواز شریف کی حب الوطنی کی گواہی دیتا ہے۔

ووٹ چور آزاد کشمیر کے انتخابات پر نظر لگائے بیٹھے ہیں،یاد رکھو مسلم لیگ ن اور اسکے شیر جاگ چکے ہیں ،ہمیں تمھارے حلق سے چوری شدہ سیٹوں کو نکالنا آگیا ہے ۔

 مریم نواز نے  دعوی کیا کہ حکومت کے وزراء پیسے بانٹتے ہوئے پکڑے گئے،تمام ریاستی وسائل جھونک دیے گئے،لیکن یہ تو بات صاف ہے کہ پی ٹی آئی کی حالت آزاد کشمیر میں پتلی ہے۔

عمران خان یہاں آکر اپنا وقت ضائع مت کرنا، آزاد کشمیر نے فیصلہ سنا دیا ہے۔سنو عمران خان آٹا چوروں ، چینی چوروں ،جان چھوڑو۔کیا تم کشمیر یوں کا آٹا چینی چھیننے آرہے ہو۔

وفاقی وزیر مراد سعید نے مریم نواز کو جواب دیتے ہوئے کہا کہ سجن جندال کو بغیر پیسہ کے مری بلا کر سیر کراتے تھے، آپ مودی کو اپنی نواسی کی شادی پر بلا کر بڑی بڑی دعوتیں کھلاتے  تھے، آم کی پیٹیاں بھیجتے تھے،شرم آپکو آنی چاہیے۔

مودی کو شادیوں پر بلانے والے

انہوں نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ  جعل سازی میں پکڑی جانے والی اور جسکی لندن میں تو کیا پاکستان میں بھی کوئی جائیدادیں نہیں(طنز) ، وہ بھی یہاں (کشمیر) پہنچی ، مودی کو شادیوں پر بلانے والے کشمیر کی بات کرتے ہیں۔

مراد سعید نے مریم کو دوٹوک انداز میں کہا کہ آپ نے کشمیر کا مقدمہ لڑا ہی کب ہے، ہر جگہ کشمیر  کے لیے عمران خان نے آواز اُٹھائی ہے ۔

انہوں نے مریم کو آئینہ دکھایا اور کہا کہ جب آپکے والد انڈیا گئے تو حریت رہنماؤں سے ملاقات سے انکار کردیا  لیکن بھارتی اداکاروں اور اداکاراؤں سے انہوں نے ملاقات کی۔

دوسری طرف دنیا نے دیکھا کہ کشمیریوں کا سفیر دنیا کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر کشمیریوں کا مقدمہ دنیا کے سامنے رکھ رہا ہے۔جو بھی ایوان ہو،او آئی سی ہو ، کشمیر کا مقدمہ عمران خان وہاں لے کر گئے ۔

آج انکی چینخیں کیوں نکل رہی ہیں یہ عمران خان کے  جذبے نے ثابت کردیا ہے ۔مراد سعید نے کشمیریوں سے سوال کیا کہ کیا انہوں نے عوام کو ہسپتال  ،تعلیمی ادارے اور سڑکیں دیں؟ اگر نہیں تو پھر کیوں آپکے پاس آرہے ہیں۔

مجھے معلوم ہے آپکا فیصلہ تبدیلی اور عمران خان کے حق میں ہے،آج سے میں اسلام آباد میں آپکا نمائندہ ہوں۔ وزیر اعظم آزاد کشمیر تو انکا ہے پھر دھاندلی دھاندلی کا شور کیوں؟ دھاندلی نہیں ہورہی ہے، آپکے کرتوت شکست کی وجہ بنیں گے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button