جون بجٹ سے متعلق تجاویز

آئندہ مالی سال 22-2021 کا 8400 ارب کا بجٹ11 جون کو آئے گا،بجٹ میں پیش کی جانے والی تجاویز سے متعلق تفصیلات سامے آگئیں۔

ذرائع کے مطابق دفاعی بجٹ کے لیے 1300 ارب روپے سے زائد فنڈز رکھے جانے کا امکان ہے۔

 جبکہ سالانہ ترقیاتی پروگرام کے لیے  900 ارب روپے، پینشن کی مد میں 470 ارب روپے،حکومتی جاری اخراجات  کے لیے 500 ارب روپے اور سبسڈیز کی مد میں 400 ارب روپے رکھے جا سکتے ہیں۔

سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 10 سے     15 فیصد اضافہ کیے جانے کا امکان ہے۔

بجٹ میں تنخواہ دار طبقے پر کوئی نیا ٹیکس نہ لگانے کی تجویز بھی دی گئی ہے ۔

آنے والے بجٹ سے پہلے متعدد اداروں کو دی گئی ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کی بھی تجویز دی گئی ہے۔

ذرائع کے مطابق بجٹ میں 20 ارب روپے سے زائد انکم ٹیکس  کی چھوٹ ختم کرنے کی تجویز بھی دی گئی ہے۔

سوشل سیکیورٹی اداروں کے لیے بھی  انکم ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کی تجویززیرغور ہے۔

تنخواہ دار طبقے کو میڈیکل الاؤنس پر  ملنے والی ٹیکس چھوٹ  کوختم  کرنے کی تجویز بھی زیر غور ہے۔

کارپوریٹ  ایگری کلچرل انکم کے منافع پر بھی ٹیکس چھوٹ ختم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

بجٹ سے متعلق  پیپلزپارٹی کی رہنما شیریں رحمٰن کہتی ہیں کہ  حکومت آئی ایم ایف بجٹ لارہی ہے،جسکی ہر سطح پر مخالفت کی جائے گی یہ عوام دشمن بجٹ منظور نہیں ہونے دیں گے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button