بھارتی کورونا لاہور کی دہلیز پر

لاہور ایک بار بھی کورونا وائرس کے نشانے پر آگیا ۔لاہور میں کورونا وائرس کی ڈیلٹا قسم کے کیسز رپورٹ ہونے کی تعداد 50 تک پہنچ گئی ہے۔

محکمہ صحت پنجاب نے شہر سے رپورٹ ہونے والے کیسز کی سائنٹفک تحقیق کی۔73 کیسز میں سے 50 کورونا کی بھارتی قسم  میں سے نکلے۔

پنجاب کے محکمہ صحت کے ذرائع کے مطابق گزشتہ 15 روز  کے دوران رپورٹ ہونے والے کیسز پر تجربہ کیا جارہا ہے۔

تحقیق کے مطابق  پنجاب کے صوبائی دارالحکومت میں 70 فیصد کیسز ڈیلٹا  قسم کے ہیں ۔کورونا وائرس کی بھارتی قسم کا ایک سے دوسرے شخص  میں پھیلاؤ بھی 100 فیصد تک ہے۔

چوبیس گھنٹوں کےدوران پنجاب سے کورونا وائرس کے 415 مزید کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔لاہور سے کورونا کے رپورٹ ہونے والے کیسز کی تعداد 246 ہے۔

این سی او سی کے سربراہ اسد عمر کہتے ہیں کہ بھارتی ویرینٹ دنیا میں پھیل رہا ہے اور اسکی وجہ سے چوتھی لہر جو شروع ہوئی ہے اس سے پاکستان کے اندر اثرات مرتب ہونا شروع ہوگئے ہیں۔

پاکستان میں بھارتی کورونا وائرس کے پھیلنے کا خدشہ بڑھ گیا ہے ۔عید کی چھٹیوں میں بھی بہت زیادہ محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔

انکا کہنا تھاکہ وہ لوگ جنہوں نے ویکسین نہیں لگوائی ہوئی اور وہ چاہ رہے ہیں کہ تفریحی مقامات پر جائیں،تو ایسا نہ ہو کہ آپ کی تفریح لوگوں کی موت کا سبب نہ بن جائے۔

پاکستان میں ابھی تک 2کروڑ 21 لاکھ ویکسین لگائی جاچکی ہیں۔ان میں سے 62 لاکھ کو دوسری ڈوز بھی لگ چکی ہے۔تو وہ لوگ جنہوں نے ویکسین نہیں لگائی ہوئی انہیں 7گنا زیادہ خطرہ ہے۔

اسد عمر نے کہا کہ پاکستانی عوام سے پُر زور اپیل کرنا چاہوں گا کہ برائے مہربانی تمام پاکستانی کورونا ویکسین ضرور لگوائیں۔

وزیر اعظم کےمعاون خصوصی برائے صحت  ڈاکٹر فیصل سلطان کا کہنا تھا کہ پچھلے دو تین دن سے روزانہ 2500 کیسز بڑھ رہے ہیں۔مثبت کیسز کی قومی شرح 5 سے 6 فیصد  ہوگئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ ہمارے ہیلتھ کیئر سسٹم پر مسلسل دباؤ  بڑھ رہا ہے ۔انہوں نے اپیل کی کہ وبا کو ختم کرنے کے لیے خدارا ماسک پہنیے۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button