پاکستا ن میں ویکسین کی تیاری کا پہلا فیز کامیاب

جمعہ کو  پاکستان  کے قومی ادارہ صحت کی جانب سے قومی اسمبلی کو بتایا گیا  تھاکہ پاکستان نے اینٹی کوڈ ویکسین کی  پاکستان  میں تیاری شروع کردی ہے۔

پارلیمنٹری سکریٹری برائے این ایچ ایس نوشین حامد نے ایوان کو بتایا  تھا کہ کینسینو ویکسین کا پہلا بیچ فی الحال این آئی ایچ میں تیار کیا جارہا ہے۔

تاہم ناول کورونا وائرس کے خلاف اپنی لڑائی میں ایک بڑی کامیابی کے طور پر پیر کو پاکستان نے اعلان کیا کہ اس نے سخت کوالٹی کنٹرول چیک کے بعد چین کی کینسو بائیو کی مدد سے ایک پاکستانی  ویکسین”پاک ویک "تیار کی ہے۔

اس اقدام کا مقصد کوویڈ ۔19 ویکسین کے لئے دوسرے ممالک پر پاکستان کے انحصار کو نمایاں طور پر کم کرنا ہے،پہلے فیز میں ایک لاکھ سے زائد خوراکیں تیار کی گئیں۔

ویکسین کی کامیاب پیداوار

پاکستان نے فروری میں چین کی حکومت کی طرف سے عطیہ کی جانے والی خوراکوں سے ویکسینیشن  کی مہم کا آغاز کیا تھا۔ مہم کا آغاز فرنٹ لائن ہیلتھ کیئر ورکرز اور پھر دوسرے مرحلے میں سینئر شہریوں کی ٹیکہ لگانے سے ہوا تھا،ملک میں  اب 30 سال یا اس سے زیادہ عمر کے لوگوں کی ویکسینیشن شروع کردی  گئی ہے، ملک میں اب تک 50 لاکھ سے زیادہ افراد کو کوڈ ۔19 کی  ویکسین لگائی جا چکی ہے۔

نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ ،این آئی ایچ  کی پاک ٹیم اور اس کی قیادت کو کینسینو بائیو انک کارپوریشن چین کی مدد سے پاکستان میں ویکسین کوکامیابی سے تیار کرنے پر مبارکباد پیش کرتا ہوں، وزیر اعظم کے خصوصی معاون برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے اپنے آفیشل ٹوئٹر ہینڈل پرلکھا۔

انہوں نے کہا کہ ویکسین نے داخلی کوالٹی اشورینس کی سخت جانچ کی ہے ،  انہوں نے اسے ویکسین سپلائی لائن کی مدد کے لئے ایک اہم اقدام قرار دیا ہے۔

وزارت قومی صحت کی خدمات کے ایک عہدیدار نے کہا ہے کہ ٹیکنالوجی کی منتقلی کے معاہدے کی وجہ سے پاکستان ہر ماہ 30 لاکھ خوراکیں تیار کر سکے گا۔

این ایچ ایس نے اعلان کیا ہے کہ چین کی کینسینو کوویڈ ۔19 ویکسین کا پہلا بیچ مئی کے آخر تک انتظامیہ کو شہریوں کولگانے  کے لئے دستیاب ہوجائے گا۔

عہدیدار نے بتایا کہ اس ماہ کے شروع میں کینسینو ویکسین کی پہلی بلک کھیپ پر قومی انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ کے پلانٹ میں کام جاری ہے ، یہ پلانٹ اس مقصد کے لئے گذشتہ ماہ تشکیل دیا گیا تھا ، اور اس پر ایک خصوصی تربیت یافتہ ٹیم کام کر رہی ہے۔

Back to top button