وزیر تعلیم نے ہتھیار ڈال دیے ، امتحانات کینسل

وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود نے منگل کو این سی او کے اجلاس کے بعد میڈیا بریفنگ کے دوران اعلان کیا ہے کہ کورونا وائرس کیسوں اور اموات میں اضافے کے باعث 15 جون تک ملک میں کوئی امتحان نہیں ہوگا۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سنٹر (این سی او سی) کے خصوصی اجلاس کے بعد اسلام آباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نویں ، دسویں، گیارہویں ،بارہویں جماعت اور  اے  لیول / او لیول ، اے ایس اور اے ٹو  سطح کے امتحانات منسوخ کردیئے گئے ہیں اور 15 جون سے پہلے ملک میں کوئی امتحان نہیں لیا جائے گا، امتحانات کی آئندہ تاریخوں کا اعلان مئی کے تیسرے ہفتے میں حالات کا جائزہ لینے کے بعد کیا جائے گا، اے  لیول / او لیول ، اے ایس اور اے ٹو سطح کے امتحانات اکتوبر نومبر کی  سائیکل میں ہونگے، تاہم ان طلباء کے امتحانات چلتے رہیں گے جو غیر ملکی یونیورسٹیوں میں درخواست دینے کے مقصد کے لئے امتحان دیناچاہتے ہیں۔

وزیر تعلیم نے کہا اس کی سختی سے ہدایت کی گئی ہے کہ پیر کے بعد اے ٹو کے ہونے والے امتحانات میں 50 سے زیادہ افراد ایک سینٹر میں نہیں ہوں گے، اور امتحانات سینٹرز کے باہر نفری تعینات ہوگی لہذا وہاں بھی ہجوم لگانے پر کاروائی کی جائے گی۔

شفقت محمود نے ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ طلباء اور ان کے والدین کی صحت سے متعلق خدشات کو حل کرنے کے لئے کیا گیا ہے۔ انہوں نے لکھا کہ 15 جون تک تمام امتحانات منسوخ ہوچکے ہیں اور یہ بیماری کے پھیلاؤ پر منحصر ہے کہ اس میں مزید توسیع ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ کیمبرج کے تمام گریڈوں کے امتحانات اکتوبر سے نومبر تک کے لئے ملتوی کردیئے گئے ہیں، اس سے ان طلبہ کو استثنا حاصل ہے جن کی ابھی ا متحان دینے کی مجبوری ہے۔

وزیر  تعلیم کے مطابق پاکستان میں یونیورسٹیوں کے داخلے کو گریڈ 12 اور اے 2 کےجو طلبہ اکتوبر نومبر میں امتحانات دے رہے ہیں ان کے لئے جنوری تک جاری رکھاجائے گا ، انہوں نے لکھا اس بات کو یقینی بنایا جائے گاکہ  کسی کا سال  ضائع نہ ہو۔

یہ فیصلہ طلباء کارکنوں اور سیاست دانوں کی طرف سے حکومت کی جانب سے تیسری کورونا وائرس کی لہر کے پیش نظر کیمبرج کے امتحانات منسوخ کرنے کی وسیع پیمانے پر کالوں کے بعد کیا گیا ہے۔

شفقت محمود نے میڈیا بریفنگ کے دوران کہا کہ 18 اپریل کو این سی او سی میں اس معاملے پر ہونے والی آخری میٹنگ کے بعد سے اس بیماری میں تیزی سے اضافہ دیکھا گیا تھا ، جب فیصلہ کیا گیا تھا کہ امتحانات شیڈول کے مطابق ہوں گے۔

Back to top button