سورج اور چاند کے حالات میں تغیرات

اللہ تعالی سورۃ یونس کی آیت 5 اور 6 میں فرماتے ہیں

"وہی ہے جس نے سورج کو تیز روشنی اور چاند کو نور بنایا اور اس کی منزلیں مقرر کیں، تاکہ تم سالوں کی گنتی اور حساب معلوم کرو۔ اللہ نے ان چیزوں کو حق کے ساتھ پیدا کیا ہے۔ وہ آیات کو ان لوگوں کے لیے تفصیل سے بیان کرتا ہے جو جانتے ہیں”۔

آج رواں سال کا پہلا چاند گرہن ہوا ، دو سال سے زیادہ  کے عرصے  میں جب چاند زمین کے قریب تھا  اسی وقت میں  چاند گرہن ہونے کے باعث اسے بلڈ مون،سپر فلاور بلڈ مون  اور سپر مون کا نام دیا گیا ہے  ۔

چاند گرہن کا آغاز پاکستانی وقت کے مطابق  دن 11 بجکر 39 منٹ پر ہوا اور   چاند کو مکمل گرہن دوپہر 4 بجکر گیارہ منٹ پر لگا  جبکہ گرہن کا اختتام 6 بجکر  5 منٹ پر ہوا۔

دن میں چاند گرہن ہونے کے باعث اسے پاکستان میں نہیں دیکھا جاسکا جبکہ ٹوکیو،ہانک کانگ اور آسٹریلیا میں چاند 14 منٹ کے لیے سرخ ہوگیا ۔

سپر مون

 آسٹریلوی ایئر لائن کی طرف سے سپر مون کا نظارہ کروانے کے اعلان کے بعد صرف دو گھنٹے میں فلائٹ کی ساری ٹکٹیں بک گئیں،توقع ہے کہ اگلا سپر بلڈ مون 2033 میں ہوگا۔

ماہرین فلکیات کا کہنا ہے کہ(کل) جمعرات کے روز  سعودیہ کے مقامی وقت کے مطابق بارہ بجکر18 منٹ پر اور پاکستان کے مقامی وقت کے مطابق 2 بجکر 18 منٹ پر  سورج عین خانہ کعبہ کے اوپر ہوگا۔

جدہ فلکیاتی سوسائٹی کے سربراہ ماجد ابو زہرا نے کہا  کہ  سورج کی ڈسک کعبہ کے  عین اوپر ٹھہر جائے گی اور سورج تھوڑی دیر کے لئے اپنا سایہ  بھی کھو دے گا۔

ماہرین فلکیات کا کہنا ہے کہ آسمانی واقعہ "زیرو شیڈو” ہر سال مسجد  الحرام میں دو بار ہوتا ہے کیونکہ اس  کی موجودگی خط استوا اور ٹروپک آف کینسر کے  درمیان ہوتی  ہے۔

زمین کے محور کے جھکاؤ کی وجہ سے سورج آسمانی خط استوا کے شمال اور جنوب میں 23.5 ڈگری پر سفر کرتا ہے۔

ابو زہرا نے کہا کہ لوگ لکڑی کی چھڑی کو زمین میں عمودی طور پر رکھ کر کعبہ کی صحیح سمت کا تعین کر سکتے ہیں۔ قبلہ کی سمت چھڑی کے سائے کے عین مطابق ہوگی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button