فلسطین میں جنگ بندی کا اعلان اور شوبز شخصیات

اقرا ءعزیز ،عدنان صدیقی اور فیصل قریشی نے 11 روزہ تشدد کے بعد غزہ میں جنگ بندی پر ردعمل  کا اظہارکرتے ہوئے کہا ہے کہ فلسطین میں اب بہت  کام کرنے کی ضرورت ہے۔

فیصل قریشی نے جنگ بندی کے بارے میں اپنی رائے کا  اظہارکرتے ہوئے کہا کہ”جنگ بندی خوش آئند ہے لیکن ابھی اور بھی بہت کچھ کرنے کی ضرورت ہے”۔

اداکار نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا  کہ "فلسطین ان گنت لوگوں کے لئے کھلا ہوا جیل  بنارہا ہے،ہر ایک دن وہ انسانیت کے خلاف مسلسل جرائم کا مشاہدہ کرتے رہے ہیں جس میں پانی اور بجلی جیسے روز  مرہ کی ضروریات کا فقدان ہے۔

فیصل نے مزید کہا کہ”تمام فلسطینیوں ، مسلمانوں ، یہودیوں  یا عیسائیوں کو ایک بار  میں اور ہمیشہ کے لئے آزاد کرنے کی ضرورت ہے” ، انہوں نے مزید کہا کہ  "اگر اب بھی  دنیا  حتمی موقف نہیں  اپناتی ہے تو ہم ہر بار کشمیر اور غزہ کی کہانی کو دہراتے رہیں گے۔ اقرا ءعزیز نے بھی اس صورتحال پر اپنے خیالات  شیئر کرتےہوئے کہا کہ "میری دعا ہے کہ ہمیں پھر کبھی اس طرح  کی صورتحال کا سامنا نہ کرنا پڑے،یہ  رویہ  غیر انسانی تھا۔

اقرا ءنے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ "میں گذشتہ 11 دنوں میں  متاثر ہونے والی تمام زندگیوں کے لئے دعا گو ہوں اور بہتر مستقبل کی امید کرتی ہوں۔

عدنان صدیقی نے سوشل میڈیا پر لکھا  کہ "بندوق خاموش ہوچکی ہیں ، مائیں بچوں اور بچےگھروں کی تلاش کر رہے ہیں، مٹی بیٹھ گئی ہے، غزہ میں صرف دھول رہ گئی ہے”۔

#جنگ بندی لیکن کس قیمت پر؟ میں جوابات ڈھونڈرہاہوں۔ دریں اثنا ءاسرائیل کےوزیر اعظم نیتن یاھو کے دفتر  کے ترجمان نے 11 روزہ تشدد کے بعد جمعہ کے روز غزہ میں جنگ بندی کا اعلان کیا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button