بلاول زرداری کا حکومت کے خلاف بڑا بیان

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے جمعرات کو خدشہ ظاہر کیا ہے کہ اگر وزیر اعظم عمران خان اپنا پانچ سالہ دورانیہ مکمل کرتے ہیں تو پاکستان دیوالیہ ہوجائے گا۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ کوروناوائرس وبائی مرض سے پہلے ہی وزیر اعظم نے ملک کی معیشت کو تباہ کردیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان اتنا نقصان کرچکے ہیں  کہ موجودہ  حکومت کی وجہ سے آئندہ حکومتوں کو کئی دہائیوں تک تکالیف کا سامنا کرنا پڑے گا۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ وہ حکمران  کیسے  ملک  چلا سکتا ہے جسے کسی نے سنجیدگی سے لیا  ہی نہیں ۔

 انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کا ملک کو خیراتی ادارے کی طرز پر چلانے  کا تجربہ ناکام ہو گیا ہے۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے کہا کہ جتنی تباہی عمران خان نے کی ہے اتنی ملک کی تاریخ میں کسی نے نہیں کی، عمران خان نے آزادی کے بعد سے اب تک  اکیلے ہی پاکستان کو  سب  سے زیادہ نقصان پہنچایا ہے،انہوں نے کہا کہ پرویز مشرف کی طرح پیسے لوٹنے کے بعد عمران خان اور ان کے حامی لندن بھاگیں گے۔

معاشی بحران

بلاول بھٹو نے زور دے کر کہا کہ عمران خان کو  معاشی بحران  ورثے میں نہیں ملا بلکہ منتخب وزیر اعظم نے اسے  خود پیدا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سب سے بڑا جرم جو پاکستان تحریک انصاف نے کیا ہے وہ نوجوانوں کی امیدوں کو ختم کرنا ہے۔

پاکستان پیپلز پارٹی کے سربراہ بلاول بھٹو زرداری نے کل کہا تھا کہ  آئندہ نسلوں نے عمران خان کی تبدیلی کی خوفناک قیمت ادا کرنی ہے، وزیر اعظم عمران خان کی حکومت کی  عوام کے لیے چھوڑی جانے والی  پونجی ” بدعنوانی اور تباہ حال معیشت” ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ بڑے پیمانے پر بدعنوانی پاکستان کی تباہ حال معیشت کی اصل وجہ  ہے۔

پیپلز پارٹی کے سربراہ نے کہا کہ کرپٹ حکمرانی سے دوچار قوم کبھی بھی معیشت کو استحکام نہیں دے سکے گی۔

یہ اشرافیہ کی حکومت ،اشرافیہ کی طرف سےاور اشرافیہ کے لئے ہے،یہ پیسہ کمانے میں مصروف ہیں ، جبکہ عوام اشیائے ضروریہ کی آسمان  تک پہنچتی قیمتوں کے بوجھ تلے دبے ہوئے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان ملک میں معاشی تباہی کے لئے مکمل طور پر ذمہ دار ہیں ، اور انکی اپنے وزراء اور مشیروں کی قربانیاں پیش کر کے  گمراہ کرنے کی تمام تر کوششوں کے باوجود  وہ اپنے اقدامات کے لئے احتساب سے بچنے کی اجازت  حاصل نہیں کرسکیں گے۔

وزیر اعظم سے مطالبہ

بلاول نے وزیر اعظم سے مطالبہ کیا کہ وہ وضاحت کریں کہ حکومت  کی طرف سے  گیس اور بجلی پر اربوں روپے وصول کیے جانے والا ٹیکس کہاں ہے؟

کیا حکومت اور اس کے ہزارہا وزراء قومی خزانے سے الگ ہوگئے ہیں؟ قومی خزانے کے متولی کی حیثیت سے ، وزیر اعظم عوام کی دولت کے ذمہ دار ہیں،وزیر اعظم کوہر پیسہ کا جواب دینا پڑے گا ۔

انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت نے پہلے زیادہ محصولات جمع کرنے کے لئے ٹیکسوں میں اضافہ کیا اور پھر اس سرمایہ سے سرمایہ داروں اور عوامی فلاح و بہبود کے منصوبوں کے نام نہاد وزیروں نے فائدہ اٹھایا۔

وفاقی حکومت اور وزیر اعظم عوام کی نظر میں سارا اعتبار کھو چکے ہیں،بدعنوانی کی نگرانی کرنے والے بین الاقوامی اداروں نے عمران خان اور ان کی حکومت کی نام نہاد شفافیت اور ایمانداری کو پوری طرح سے بے نقاب کردیا ہے۔

پیپلز پارٹی کے رہنما نے کہا کہ عمران خان کی اپنی پارٹی کے اراکین نے ان کی منصفانہ اور ایمانداری سے حکومت کرنے کی صلاحیت پر سوال اٹھائے ہیں۔

بلاول نے کہاکہ جھوٹ بولنے والا جس نے بیک روم کے سودوں اور جھوٹے وعدوں کے ذریعے اقتدار کی راہداریوں  میں داخلہ لیا ہے اس پر کبھی بھی اعتبار نہیں کیا جاسکتا ہے اور نہ ہی وہ ملک کے عوام کے ساتھ مخلص ہوسکتا ہے۔

 عمران خان کا مینڈیٹ لوگوں کی طرف سے  منتخب ہونا نہیں  تھا لہذا وہ ان کی خدمت  کیسےکرسکتاہے۔

عوام کی مرضی کا حقیقی نمائندہ ہی پاکستان کو اس دلدل سے بچانے کے قابل  ہوسکتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button