فاطمہ جناح اور ایدھی کی برسی

ممتاز مخیر  اور انسان دوست شخصیت عبد الستار ایدھی کی برسی 8 جولائی ،بروز جمعرات کو منائی  گئی۔

 عبد الستار ایدھی  28 فروری 1928 کو برصغیر کی تقسیم سے قبل گجرات میں پیدا ہوئے۔ انہوں نے 8 جولائی ، 2016 کو 88 سال کی عمر میں کراچی میں  اپنی آخری سانس لی۔

ایدھی نے 1951 میں فلاحی خدمات کا آغاز کیا اور بعد میں ملک بھر میں بے گھر افراد کے لیے پناہ گاہوں ، جانوروں کی پناہ گاہوں اور یتیم خانوں کے ساتھ ساتھ دنیا کا سب سے بڑا رضاکار ایمبولینس نیٹ ورک قائم کیا۔

عبدالستارنے ایک بامقصد طرز زندگی کے لئے معاشرے کے ہر طبقے سے عزت حاصل کی ۔وہ غریبوں  اور محتاجوں کی مدد کے لئے ان کے پس منظر سے قطع نظر وقف تھے۔

ایدھی نے 2013 میں ایک انٹرویو کے دوران بتایا  کہ”جب میری ایمبولینس ایک زخمی شخص کو یا تکلیف  زدہ شخص کو ہسپتال لے جاتی ہے  تو  مجھے یہ سوچ کر  سکون ملتا ہے کہ میں نے ایک زخمی شخص کی مدد کی جو تکلیف میں مبتلا تھا۔

عبدالستار ایدھی کو قومی اور بین الاقوامی سطح پر انسانیت کی  بے لوث خدمات کے لئے متعدد ایوارڈز سے نوازا گیا۔

گزشتہ روز  عبدالستار ایدھی کی پانچویں برسی پر کوئٹہ میں انکے مجسمے کا افتتاح کیا گیا۔مجسمے کا افتتاح  فیصل ایدھی نے کیا۔

مجسمے کے افتتاحی پروگرام میں وزیر داخلہ ضیاء لانگو شریک ہوئے۔تقریب کے موقع پر فیصل ایدھی کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے عوام عبدالستار ایدھی سے محبت کرتے تھے۔

فاطمہ جناح

دوسری جانب تحریک پاکستان میں بانی پاکستان کے شانہ بشانہ کام کرنے والی انکی ہمشیرہ کی آج 53 ویں برسی منائی جارہی ہے۔

محترمہ فاطمہ جناح نے تحریک پاکستان میں اہم کردار اداکیا۔محمد علی جناح اور فاطمہ جناح، بھائی بہن کے درمیان ایثار و محبت کی اعلی مثال تھے۔

فاطمہ جناح 31 جولائی 1893 کوکراچی میں  پیدا ہوئیں انہوں نے پہلے تحریک پاکستان اور پھر پاکستان کے لیے  بے مثال کردار ادا کیا۔

انکی قوم کے لیےگراں قدر خدمات کے باعث انہیں مادر ملت کا خطاب دیا گیا۔وہ  9 جولائی1967 کو 77 سال کی عمر میں انتقال کرگئیں۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button