سفیر کی بیٹی , اغوا کیس میں پیشرفت

افغان سفیر کی بیٹی کے مبینہ اغوا کے معاملے میں بڑی پیش رفت ہوئی ہے۔آئی جی اسلام آباد کہتے ہیں لڑکی جہاں جہاں گئی  وہ ساری سی سی ٹی وی  فوٹیجز ہمیں مل گئی ہیں۔ڈرائیورز سے بھی تفتیش کر لی گئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ 100 سے زائد کیمروں کو  شامل تفتیش کیا گیا،700 گھنٹوں سے زائد کی ریکارڈنگ دیکھی گئی،220 سے زائد لوگوں  سے پوچھ گچھ کی گئی ہے۔

لڑکی نے الزام لگایا کہ دوسری ٹیکسی میں اس پر حملہ کیا گیا ۔وہ ٹیکسی بھی مل گئی ہے۔ڈرائیور سے تفتیش بھی کرچکے ،جو کچھ کہا گیا وہ ہماری تفتیش میں درست نہیں نکلا۔

مشیر قومی سلامتی معید یوسف نے کہا ہے کہ بھارت کے تصدیق شدہ اکاؤنٹ سے سفیر کی بیٹی کی جعلی تصویر شیئر  کی گئی۔بھارت اور افغانستان میں پاکستان مخالف ٹرینڈ چلائے جارہےہیں۔

اس واقعے میں بھی بھارت کے وہی اکاؤنٹس استعمال ہوئے جو اس پہلے بلوچستان اور کشمیر کے معاملے میں پاکستان مخالف استعمال ہوچکے ہیں۔

بھارت کے ایک ویریفائڈ اکاؤنٹ  سے افغان سفیر اور ا نکے ساتھ ایک زخمی عورت کی تصویر لگا کر یہ ظاہر کیا گیا کہ یہ افغان سفیر کی بیٹی ہیں جبکہ اس تصویر کا ان سے کوئی تعلق نہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم افغانستان کے ساتھ آگے چلنے لگتے ہیں اور ہمارے انکے ساتھ کچھ معاملات بہتر ہونے لگتے ہیں تو یہ چیزیں شروع ہوجاتی ہیں۔ معید یوسف نے دوٹوک انداز میں واضح کیا کہ پاکستان کو افغانستان میں اسکیپ بورڈ بنایا جارہا ہے ،کسی اور کی افغانستان میں  ناکامیاں ہمارے اوپر ڈالنا        ہمیں کسی صورت برداشت نہیں ہوگا۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button