کوئٹہ میں عبدالستار ایدھی کے اعزاز میں مجسمہ نصب

دنیا کے سب سے بڑے مخیر عبدالستار ایدھی کو ہمارا ساتھ چھوڑے ہوئے تقریبا پانچ سال ہوگئے ہیں ۔ اگرچہ ان کی موت نے سب کے دلوں میں ایک غم چھوڑ رکھا ہے ، لیکن عوام پھر بھی وقتا فوقتا ان کے کام کو اور انہیں عزت دینے کی کوشش کرتے رہتے ہیں ۔ ملک بھر میں لوگ انسانی خدمت کرنے والے اس عظیم انسان کی تعظیم اور ان کی افسانوی شخصیت کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے متعدد طریقے اختیار کرتے رہے ہیں ۔

اشعار لکھنے سے لے کر اعلی شخصیات کا ایدھی صاحب کے گھر کے دوروں تک ، پاکستان اس بات کی پوری کوشش کرتا رہا ہے کہ ملک کی خدمت کرنے والے اس سب سے بڑے آدمی کو ہمیشہ یاد رکھا جائے ۔

چند فنکاروں نے پینٹنگز کے ذریعے ایدھی صاحب سے اپنی محبت کا اظہار سوشل میڈیا پر کیا ۔ اب کوئٹہ میں ایدھی صاحب کا مجسمہ بنایا گیا ہے ۔ مجسمہ ساز اسحاق لہڑی کے ذریعہ تیار کردہ ، مرحوم انسان دوست ایدھی صاحب کا مجسمہ شہر کے ایدھی چوک پر رکھا گیا ہے ۔

اس سے قبل ، ایدھی کی انسانیت کے لئے کی جانے والی کوششوں کوعالمی سطح پر بھی تسلیم کیا گیا ہے ۔ ڈینیل سوان ، ایک برطانوی سماجی کارکن نے حال ہی میں لندن کے ٹرافگلر اسکوائر میں ایدھی صاحب کے لیے دیوار بنائی ۔ وہ ایدھی کی انسانیت کے لیے کاوشوں سے بہت متاثر ہیں ۔

سوان مزید لکھتے ہیں ، کہ شاید ہم وہ کام کرتے ہیں جسے بہت سارے لوگ پیسہ کمانے کے لیے ڈریعہ بناتے ہیں ، لیکن ایدھی صاحب دنیا کی سب سے بڑی کارپوریشن میں سے ایک کے لئے کام کرتے تھے ، یعنی انسانیت کے لیے جس کی وہ کچھ بھی قیمت نہیں رکھتے تھے ۔

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button